استاد کا مقام| احمد رضا

‏💕 استاد کا مقام💕

ہمارے معاشرے میں استاد کا احترام آج سے چند سال پہلے ایسا ہوا کرتا تھا جیسے والدین کا۔اس کی وجہ یہ تھی کہ بچے کی تربیت تو والدین کی گود سے شروع ہوجایا کرتی ہے لیکن بچے کو عقل وشعور اور عِلم ملتا ہے اساتذہ کے پاس سے۔

جو قومیں اپنے اساتذہ کا احترام نہیں کرتیں کبھی ترقی نہیں

اشتہارات


Qries

کرسکتیں۔ہمارے دینی استاد نبی پاک ﷺ ہیں اور ہمیں نبی پاک کی ﷺ کی سُنت پہ عمل کرتے ہوئے اپنے اساتذہ کا احترام کرنا چاہیئے لیکن لمحہ فکریہ ہے کہ آج کی نوجوان نسل اپنے اساتذہ کو وہ عزت و احترام نہیں دے رہی جو ان کا حق ہے۔اللہ تعالیٰ نے قرآن میں حضور ﷺ کی شان بحیثیت معلم بیان کی ہے۔اسلامی نظام تعلیم میں استاد کو مرکزی مقام حاصل ہے معلم کی ذات ہی علمی ارتقاء سے وابستہ ہے‘نئی نسل کے مستقبل کی تعمیر کے سلسلے میں استاد کی مثال ایک کسان اور باغبان کی سی ہے۔علامہ محمداقبال کے یہ الفاظ معلم کی عظمت و اہمیت کے عکاس ہیں۔’’استاد در اصل قوم کے محافظ ہیں کیونکہ آئندہ نسلوں کو سنوارنا اور ان کو ملک کی خدمت کے قابل بناناانہی کے سپرد ہے۔سب محنتوں سے اعلیٰ درجے کی محنت میں سب سے زیادہ بیش قیمت ہے کیونکہ تمام قسم کی اخلاقی تہذیب و تمدنی اور مذہبی نیکیوں کی ڈور انکے ہاتھ میں ہے اور ہر قسم کی ترقی کا سر چشمہ ان کی محنت ہے۔‘‘ہنری ” کا کہناہے:مُعلم فروغ علم کا ذریعہ ہے لیکن اس کے علم سے فائدہ و ہ نیک بخت اُٹھاتے ہیںجن کے سینے ادب و احترام کی نعمت سے مالا مال ہوں ”حضرت علی ؓنے فرمایا!’’جس نے مجھے ایک حرف بھی بتایا میں اس کا غلام ہوں۔‘‘وہ چاہے مجھے بیچے۔آزاد کرے یا غلام بنائے رکھے۔‘‘ایک دوسرے موقعے پر فرماتے ہیں کہ’’عالم کا حق یہ ہے کہ اس کے آگے نہ بیٹھو اور ضرورت پیش آئے تو سب سے پہلے اس کی خدمت کے لئے کھڑے ہو جائو۔‘‘مگر آج ہم اپنے والدین کے آگے چلتے ہیں اساتذہ کے احترام میں کھڑا ہونا تو دور ان سے آگے چلنا انکے برابر بیٹھنے کو فخر سمجھتے ہیں ” کاش ہم ان ہستیوں کے احترام کو جان سکیں کہ آج ہم جو ہیں وہ اپنے استاد اپنے مُعلم اپنے محسن کی وجہ سے ہیں ۔ آج ایک پولیس کے آنے سے پورا محلہ کانپ اٹھتا ہے۔مجسٹریٹ کا رعب و دبدبہ افراد پر کپکپی طاری کر دیتا ہے۔لوگ پولیس والے،مجسٹریٹ،جج اور دیگر افسران کے برابر بیٹھنا اُن کی بے ادبی تصور کرتے ہیں لیکن استاد جس کی محنت،کوشش اور شفقت سے یہ افراد ان بالا عہدوں پر فائز ہیں اُن کی قدر معاشرہ کرنے سے قاصر ہے۔

تحریر احمد رضا

‎@Dr_ARaza

0 0 ووٹس
Article Rating
سبزکرائب
مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام کمنٹس دیکھیں
0
Would love your thoughts, please comment.x
%d bloggers like this: