بلین ٹری سونامی پروجیکٹ کا ایک اور فائدہ بڑا ملک معاہدے کیلئے تیار

‏2 ارب روپے کے خرچ سے 15 ارب سالانہ

پختون خواہ حکومت نے پچھلے سال بلین ٹری سونامی منصوبے کے ساتھ ساتھ شہد کی پیداوار بڑھانے کیلئے اقدامات شروع کئے تھے.

جسکی مد میں ساڑھے 7 لاکھ رقبے پر 7 مختلف اقسام کے ایسے درخت لگائے جارہے ہیں. جن پر شہد کی مکھیاں چھتے بنانا پسند کرتی ہیں

‏ان میں بیری اور زیتون وغیرہ کے درخت شامل ہیں. 2 ارب روپے کا یہ منصوبہ 2 سال میں مکمل ہوگا. جسکے تحت 3 کوالٹی کنٹرول لیبارٹریاں اور 30 کلیکشن پوائنٹس بھی بناے جائیں گے. مقامی افراد کو دعوت دی گئی تھی کہ وہ درختوں کی حفاظت کو یقینی بناتے ہوئے شہد کی مکھیوں کی افزائش نسل کریں.

‏تاکہ شہد کی پیداوار بڑھے. حکومت ان افراد سے شہد خرید کر عالمی مارکیٹ میں فروخت ممکن بناے گی. چناچہ اس سال جو تھوڑا بہت شہد حاصل ہوا وہ پاکستان میں موجود غیر ملکی سفیروں کو بطور تحفہ بھجوایا گیا ساتھ میں اس شہد کی پیداوار کا طریقہ کار بھی بھیجا گیا. سعودی عرب کے سفیر کو یہ شہد

‏اتنا پسند آیا کہ انہوں نے بلین ٹری سونامی منصوبے سے حاصل ہونے والے تمام شہد کو خریدنے میں دلچسپی ظاہر کرتے ہوئے باقاعدہ معاہدہ کرنیکی آفر کردی.

حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ منصوبے کی تکمیل اور مقامی افراد کی دلچسپی کو دیکھتے ہوئے امید کی جارہی ہے کہ سالانہ 15 ارب روپے کا شہد

‏برآمد ہوا کرے گا. امید ہے منصوبہ مکمل ہوگا اور پلان کے مطابق حوصلہ افزا نتائج حاصل ہوں گے…..!!!

بطور عام پاکستانی دعا ہے اے ارض وطن تجھے مضبوط اور خوشحال بنانے کی ہر کوشش کامیاب ہو

True Journalizm

Coloumnist | Blogger | Space Science Lover | IR Analyst | Social Servant Follow on twitter www.twitter.com/truejournalizm MSc Mass Communication

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: