ایک اور دن، ایک اور میچ، ایک اور فتح، جہاں کہانی کل ختم ہوئی آج پھر وہیں سے شروع ہوئی

وہیں سے آج پھر شروع ہوئی بنگلہ دیش نے صرف ٹاس ہی جیتا اور آج پھرپاکستان نے جیتا میچ،

اشتہارات


Qries

جیتی سیریز اور جیتا دل جب گیند آفریدی کے شاہین کے ہاتھ

میں ہوتی ہے تو دنیا رک سی جاتی ہے، کیونکہ یہ جوان پہلے اوور میں وکٹ لینا نہیں بھولتا، آج بھی ایسا ہی ہوا، وسیم جونئیر نے بھی سلپ میں کھڑے فخر کی مدد سے دوسرے ہی اوور میں وکٹ لی تو میچ پھر سے یکطرفہ ہونے لگا، بورنگ محسوس ہونے لگی، اب شنتو نے ذرا ہاتھ پاؤں کھولے اور کھل کر کھیلنا شروع کیا، کپتان جانی کے نائب خان نے اس بار گیند سے کمال دکھایا اور اس بنتی ہوئی پارٹنرشپ کو پہلی ہی گیند پر توڑا، اور پھر سبھی آتے گئے اور بنگلہ دیش کو آؤٹ ہونے کا طریقہ سکھاتے گئے۔

نواز، شاداب، آفریدی نے دو دو اور حارث و وسیم نے ایک وکٹ لی اور ٹارگٹ ملا 109 رنز کابابر جانی پھر بدترین انداز میں بولڈ ہوئے تو فخر زمان اور رضوان نے مل جل کر اس بھیڑی پچ پر سکور کنارے تک پہنچایا، رضوان 39 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے تو حیدر علی نے آ کر فخر زمان کا تھوڑا سا ساتھ دیا اور پاکستان 8 وکٹوں سے میچ جیت گیا ۔

فخر نے ناقابل شکست 56 رنز بنائے سیریز ہم جیت چکے ہیں، فائنل میچ کیلیے بینچ پاور آزما لینی چاہیے، افتخار، دھانی، سرفراز اور عثمان قادر کو کھیلنا چاہیے ۔ان شاء اللہ اگلا میچ جیت کر ہم نہ صرف کلین سویپ کریں گے بلکہ ٹی ٹونٹی کی عالمی درجہ بندی میں پہلا نمبر بھی ہمارا ہو گا ۔ ان بنگالی اللہ کے بندوں کو پتہ نہیں کب عقل آنی ہے کہ آپ دنیا کی بہترین ٹیموں کو گھر بلا کر سلو پچز پر کھلاتے ہیں اور وہ بیچارے آپ کو نہ جاننے کی وجہ سے رگڑا کھا جاتے ہیں، یہ پاکستانی ہیں جن کا آپ مشرقی بازو ہوا کرتے تھے، یہ آپ کو اصلاً بھی جانتے ہیں اور نسلاً بھی ۔

ٹیم انتظامیہ، گراؤنڈز مین اور بورڈ کے عہدیداروں کو سمجھنا چاہیے کہ ایسا ہی ہوتا رہا تو آپ کی ٹیم کبھی ترقی نہیں کر سکے گی، نہ کچھ سیکھ سکے گی، پراپر پچز بنائیں تا کہ ایک مکمل گیم ہو اور دونوں اطراف کے نہ صرف کھلاڑی بلکہ شائقین بھی محظوظ ہوں۔اور ایک اور خاص بات مجھے بنگلہ دیشی تجزیہ کاروں کی کمنٹری سن کر اپنا بازید خان اچھا لگنے لگ گیا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: