اگر مسلمان نہ ہوتے تو دنیا کا نقشہ کیسا ہوتا؟

ایان آرتھر بریمر، ایک پولیٹیکل سائنٹسٹ اور یونیورسٹی کے پروفیسر نے ایک اہم نکتہ پر روشنی ڈالی کہ مجموعی طور پر مسلمانوں کی تعداد صرف 0.00625 فیصد ہے۔
اس نے دراصل مسلمانوں کے بغیر دنیا کا تصور کیا کہ اگر مسلمان اس دنیا میں نہ ہوتے تو موجُودہ دنیا کا نقشہ کیسا ہوتا، پروفیسر ایان بریمر نے دانتوں کے برش سے لے کر ہسپتالوں تک مسلمانوں کی تمام ایجادات پر روشنی ڈالی۔

اگر مسلمان نہ ہوتے تو آپ کے پاس یہ کچھ نہ ہوتا

کافی
کیمرے
تجرباتی طبیعیات
شطرنج
صابن
شیمپو
پرفیوم/اسپرٹ
آبپاشی کا نظام
کرینک شافٹ، انٹرنل کمبسچن انجن، والوز، پسٹن
کمبینیشن لاک
آرکیٹیکچرل ایجادات [محراب(یورپی گوتھک کیتھیڈرلز نے اس تکنیک کو اپنایا کیونکہ اس نے عمارت کو بہت زیادہ مضبوط بنایا), روز وںڈوز، گنبد پر مبنی عمارتیں، گول ٹاور وغیرہ]

جراحی کے آلات
اینستھیزیا
پون چکی
کاؤپاکس کا علاج
فاؤنٹین قلم
نمبر سازی کا نظام
الجبرا/ٹرگنومیٹری
جدید کرپٹولوجی
تھری کورس کھانا (سوپ، گوشت/مچھلی، پھل/گری دار میوے)

کرسٹل شیشے
قالین
چیکس
باغات جو جڑی بوٹیوں اور باورچی خانے کے بجائے خوبصورتی اور مراقبہ کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔
یونیورسٹی
آپٹکس

ٹوتھ برش
ہسپتال
حمام
لحاف
میرینر کا کمپاس
سافٹ ڈرنکس
پینڈولم
بریل
کاسمیٹکس
پلاسٹک سرجری
خطاطی
کاغذ اور کپڑے کی تیاری

یہ ایک مسلمان تھا جس نے محسوس کیا کہ روشنی ہماری آنکھوں میں داخل ہوتی ہے، یونانیوں کے برعکس جو سوچتے تھے کہ ہم شعاعوں کا اخراج کرتے ہیں، اور اس نے اس دریافت سے ایک کیمرہ ایجاد کیا۔

یہ ایک مسلمان تھا جس نے پہلی بار 852 میں اڑان بھرنے کی کوشش کی، حالانکہ بعد یہ رائٹ برادران نے کریڈٹ لیا ہے۔

یہ جابر بن حیان کے نام سے ایک مسلمان ہی تھا جو جدید کیمسٹری کے بانی کے طور پر جانا جاتا تھا۔ اس نے ڈسٹلیشن، پیوریفیکیشن، آکسیڈیشن، ایویپوریشن اور فلٹریشن کی ایجاد کی۔ اس نے سلفیورک اور نائٹرک ایسڈ بھی دریافت کیا۔

یہ الجزری کے نام سے ایک مسلمان ہی تھا جسے روبوٹکس کا باپ کہا جاتا ہے۔

یہ ایک مسلمان ہی تھا جو ہنری پنجم کے قلعے کا معمار تھا۔

یہ ایک مسلمان تھا جس نے آنکھوں سے موتیا چوسنے کے لیے کھوکھلی سوئیاں ایجاد کیں، یہ تکنیک آج بھی استعمال ہوتی ہے۔

جینر اور پاسچر نہیں بلکہ یہ ایک مسلمان تھا جس نے دراصل کاؤ پاکس کے علاج کے لیے ویکسین کی دریافت کی تھی۔ بعد میں مغرب اس ایجاد کو ترکی سے لے کر آیا ہے۔

یہ مسلمان ہی تھے جنہوں نے ریاضی جیسے الجبرا اور مثلثیات/ٹرگنومیٹری میں بہت زیادہ حصہ ڈالا، جسے 300 سال بعد یورپ میں درآمد کیا گیا۔

گیلیلیو سے 500 سال پہلے، یہ مسلمانوں نے ہی دریافت کیا تھا کہ زمین گول ہے۔

اور یہ لسٹ یہاں رکتی نہیں ہے بلکہ بہت طویل ہے، مختصراً یہ کہ اس دنیا کا نقشہ بلکل ہی الگ ہوتا اگر مسلمان اس دنیا میں نہ ہوتے۔

حوالہ جات

جرمن دستاویزی فلم

برطانوی فلم

بی بی سی کی رپورٹ

https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=2550624671839359&id=1391449297756908

Syed Muhammad Ali

Student of Electrical Engineering,Blogger, Website Designer, Graphic Designer, Website Manager and Social Media Manager

0 0 ووٹس
Article Rating
سبزکرائب
مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام کمنٹس دیکھیں
0
Would love your thoughts, please comment.x
%d bloggers like this: