پاکستان میں موبائل کی صنعت کی ترقی تین سالوں میں کیا ہوا؟؟ احداف کیا ہیں؟

‏کیا یہ تبدیلی نہیں ہے؟

2017 میں پاکستان اپنی ضرورت کے 99 فیصد موبائل امپورٹ کرتا تھا جس پر 3 ارب ڈالر سے زائد لاگت آتی تھی. موجودہ حکومت نے 2019 میں پہلی موبائل پالیسی منظور کی تو آئی فون اور ہواوے کے علاوہ دنیا کی تمام بڑی کمپنیاں بھاگی چلی آئیں. اس وقت ملک بھر میں 28 اسمبلی ‏اور مینوفیکچرنگ پلانٹ کام کررہے ہیں. جنہوں نے سال 2021 میں 2 کروڑ 40 موبائل بناے اور اسمبل کئے ہیں.

جو ملکی ضرورت کا 71 فیصد بنتے ہیں. سال 2022 میں ملکی ضرورت کا 90 فیصد مقامی سطح پر ہی بنانے کا ہدف ہے. 2021 میں بناےگئے موبائل فونز میں سمارٹ فونز کی تعداد 40 فیصد ہے. جس میں ‏رواں سال مزید اضافہ ہوگا. پالیسی کے تحت 2025 تک100فیصد موبائل اسیسریز / پارٹس 🇵🇰 میں ہی تیار کرنیکاہدف ہے. جو انشااللہ حاصل ہوگا. اعدادوشمار کےمطابق 15 ہزار لوگوں کو روزگار ملا ہے جس میں وقت کےساتھ مزید اضافہ ہوگا.

میں اسے تبدیلی نہیں انقلاب سمجھتاہوں. آپکی مرضی آپ جوبھی سمجھیں.

True Journalizm

Coloumnist | Blogger | Space Science Lover | IR Analyst | Social Servant Follow on twitter www.twitter.com/truejournalizm MSc Mass Communication

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: