میچ کہانی پشاور کے جوانوں نے کوئٹہ کے گلیڈیٹرز کو بچھاڑدیا

پشاور نے ٹاس جیت کر کوئٹہ کو بلے بازی کی دعوت دے بیٹھے، تاجِ برطانیہ کے نام لیوا وِل سمیڈ اور احسن علی نے باری کا آغاز کیا اور کیا ہی شاندار آغاز کیا، ثمین گل کے پہلے اوور سے کہانی شروع ہوئی، دونوں بلے بازوں نے سہیل خان کی عمدہ پٹائی کی، براؤن کو لال پیلا کر دیا، حسین طلعت کو رگڑا لگایا اور بین کٹنگ کی اعلیٰ کٹنگ کی، پشاور میں کامران اکمل نہیں تھے تو ساری ٹیم نے مل کر کیچز چھوڑے اور ان کو بہترین خراجِ تحسین پیش کیا، دونوں بلے بازوں کو لمبی باری کھیلنے کا موقع دیا، سولہویں اوور میں چاچا عبدالقادر کے منڈے نے احسن علی کو باہر بھیجا تو اسی اوور میں بین ڈکٹ بھی واپس چل دیے، دوسری جانب ول سمیڈ کی مار دھاڑ جاری رہی، 61 گیندوں پر 11 چوکوں اور 3 فلک بوس چھکوں سے مزین باری کھیل کر 97 رنز بنائے، آخری دو گیندوں پر باؤنڈری لگا کر سنچری کر سکتے تھے مگر خیر۔۔۔!

احسن علی کو داد دینی بنتی ہے، کیا ہی مکمل بیٹنگ پیکج رکھتا ہے یہ شاندار کھلاڑی 😘

پشاور میں کامران اکمل نہیں تھے تو ساری ٹیم نے مل کر کیچز چھوڑے

پشاور کے زلمیوں کو گیند بازی کرنی نہیں آتی، فیلڈنگ بھی نہیں آتی اور شرم تو بالکل نہیں آتی 😒

191 کے ٹارگٹ کا پیچھا کرنے کیلیے زلمی نے دھماکے دار تو نہیں البتہ اچھا سٹارٹ لیا، لیکن کمال کیا سر ڈان حسین طلعت نے جنہوں نے قائم مقام کپتان شعیب دی اولڈ ملک کے ساتھ مل کر 79 رنز کی پارٹنر شپ قائم کی اور فتح کوئٹہ کے جبڑوں سے کھینچ لائے، باقی کا کام شعیب ملک نے کیا، جیمز فالکنر کی شاندار دھلائی کرتے ہوئے سیکنڈ لاسٹ اوور میں 20 رنز بٹور کر میچ اپنی گرفت میں کر لیا، آخری اوور میں چار رنز رہتے تو نسیم شاہ نے وائیڈ کی، اگلی گیند پر ردرفورڈ آؤٹ اور پھر شعیب ملک نے دو گیندیں قبل ہی یہ ٹارگٹ پورا کر لیا۔

شاندار میچ کا شاندار اختتام، چوکوں چھکوں کی برسات میں زلمی نے کوئٹہ کے خلاف اپنا جیت کا ریکارڈ اور پی ایس ایل کی روایت برقرار رکھی کہ ٹاس جیتو اور میچ جیتو۔

کوئٹہ نے دس سے بیس رنز کم بنائے، خاص کر احسن علی کے آؤٹ ہونے کے بعد سے آخر تک وہ مومینٹم برقرار نہ رہ سکا، زلمی نے میچ جیت کر اپنے فیلڈرز اور گیند بازوں کی غلطیوں پر پردہ ضرور ڈال دیا مگر اگلے میچز کیلیے ان کو مزید اچھا کرنے کی ضرورت ہے، سہیل خان شاید اسلام آباد کے علاوہ ہر ٹیم سے کھیل چکا ہے، اور اب لگتا ہے کہ یہ اس کا آخری سیزن ہو گا، نہ فیلڈنگ اس کے پاس ہے نہ گیند بازی 😒 مکی آرتھر کا شکریہ کہ اس کو ٹیم سے باہر نکالا

آخری بات اس ٹورنامنٹ کی افادیت کے حوالے سے 🥰 یہ اتنا بڑا پلیٹ فارم ہے کہ برٹش کھلاڑی یہاں آ کر خود کو دنیا کے سامنے متعارف کرواتے ہیں اور اپنی نیشنل ٹیم کے دروازے کر دستک دیتے ہیں، ول سمیڈ اور ڈیوڈ ملان اس کی زندہ مثالیں ہیں 😘 اور یہ سب اس لیے کہ اس کا

LevelHai

ہی سب سے جدا ہے، یہ لیگ اپنی الگ پہچان رکھتی ہے ❣️

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: