پاکستان کا پروجیکٹ عزم کیا ہے؟؟

ترکی نے روس سےایس-400 خریدا تو امریکہ نے ایف-35 فائٹر طیارے دینے کا معاہدہ منسوخ کردیا۔ ترکی نے خود کفالت کا نظریہ اپنایا اور ادھر ادھر نظریں دھوڑائیں۔ مسلم دنیا میں پاکستان ہی فضائی ٹٰیکنالوجی کا حامل ملک نظر آیا۔ چناچہ ففتھ جنریشن کا حامل طیارہ ملکر کر بنانے ‏کے لئے پاکستان ائیروناٹیکل کمپلیکس کے ساتھ معاہدہ کرلیا۔ مشترکہ شاہکار جے ایف 17 تھنڈر کی نسبت رفتار میں 300 کلومیٹر تیز ہوگا۔ 55 ہزار فٹ کی بلندی پر پرواز کرئیگا۔ 1100 مربع کلومیٹر کے ایریا میں تباہی کی صلاحیت ہوگی۔ 2025 میں ٹیسٹ رن اور 2028 میں باقاعدہ پروڈکشن شروع ہوگی۔ ‏تمام قسم کے میزائل لانچ کرنیکی قابلیت والے اس طیارئے کی تیاری میں چین بھی پس پردہ دونوں ملکوں کی معاونت کریگا کیونکہ چین بھی امریکہ کی اجاہ داری کا خاتمہ چاہتا ہے۔ پاکستان کا بھی بیرونی انحصار کم ہوگا۔ دونوں ملک طیارئے کی دوسرئے ممالک کو فراہمی کا ارادہ بھی رکھتے ہیں۔ روزنامہ نوائے وقت کے مطابق پاکستان نے عزم پروجیکٹ کو ٹی ایف ایکس پروگرام کے ساتھ ضم کردیا ہے جس کے بعد یقینا دونوں ممالک کی فضائیہ کی طاقت میں نمایاں اضافہ ہوگا
َاللہ پاک سے دعا ہے کہ وہ ارض پاک کو ہر قسم کی مصیبتوں سے محفوظ رکھے آمین

Unlimited Web Hosting

True Journalizm

Coloumnist | Blogger | Space Science Lover | IR Analyst | Social Servant Follow on twitter www.twitter.com/truejournalizm MSc Mass Communication

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: