روس-یوکرین جنگ: لیک شدہ ویڈیوز، جن میں دکھایا گیا ہے کہ یوکرینی سپاہیوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، ہلاک کیا جا رہا ہے

انتباہ: گرافک اور پریشان کن مواد بچے اور کمزور دل افراد اس سے دور رہیں

ایک دل دہلا دینے والی ویڈیو جس میں مبینہ طور پر ایک یوکرائنی جنگی قیدی کو ایک روسی فوجی کے ہاتھوں تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، نے پوری دنیا میں ہلچل مچا دی ہے۔

سوشل میڈیا ایپ ٹیلیگرام پر ایک روس نواز اکاؤنٹ پر پوسٹ کی گئی اس کلپ میں یوکرین کی وردی میں ملبوس ایک شخص کو دکھایا گیا ہے جس کا منہ بندھا ہوا ہے، اور اس کے ہاتھ اس کی پیٹھ کے پیچھے بندھے ہوئے ہیں، جب کہ روسی کیموفلاج میں ایک شخص بولٹ کٹر کا استعمال کرتے ہوئے اس جنگی قیدی جسم کے تولیدی اعضاء کو کاٹ رہا ہے۔

کیف پوسٹ نے کہا کہ یہ وحشیانہ فوٹیج پہلی بار جمعرات کو کئی روسی ٹیلی گرام چینلز پر یوکرینی ماؤں کو دل دہلا دینے والی انتباہ کے طور پر سامنے آئی کہ وہ اپنے بیٹوں کو جنگ میں نہ بھیجیں۔

کلپ میں نظر آنے والے دو فوجی روسی زبان میں بات کر رہے ہیں اور بڑے حرف Z کے ساتھ ایک کار کے قریب کھڑے ہیں، یہ علامت کریملن کے فوجیوں کے لیے استعمال ہوتی ہے۔

متاثرہ شخص کو اس کی پچھلی طرف سے بندھے ہوئے اور خون میں لت پت دیکھا جا سکتا ہے جب اسے تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا تھا اور پھر قتل کر دیا گیا تھا۔

تشدد کے بعد، اسے گولی مار کر قتل کر دیا گیا اور اس کی لاش کو رسی کے ذریعے سڑکوں پر گھسیٹا گیا۔”

روسی فوجی نے یوکرین کے ایک قیدی کے عضو تناسل کو کاٹنے کے لیے کٹر کا استعمال کر رہا ہے۔
لیک شدہ ویوڈیو سے حاصل شدہ:یوکرینی جنگی قیدی کو تشدد کا نشانہ بنانے کی بعد مار کر رسیوں کے ساتھ باندھ کر گھسیٹا جارہا ہے۔

وحشیانہ فوٹیج – جس کی تصدیق جمعہ کو ایک یوکرائنی سیاست دان اور صحافی نے کی ہے – دکھایا گیا ہے کہ مبینہ طور پر وٹالی اروشانوف کی قیادت میں فوجیوں نے یوکرینی جنگی قیدی کے سر پر لات ماری جب وہ فرش پر رسیوں سے جکڑا ہوا تھا۔

اس کا منہ بند کر کے، تشدد زدہ قیدی مایوسی میں کراہ رہا ہے جب فوجی اس کی پشت کو بے نقاب کرنے کے لیے اس کی پتلون کو پھاڑ دیتے ہیں۔

جب وہ چیختا ہے اور کراہتا ہے، تو وہ اس کے جنسی اعضاء کو کاٹنے کے لیے بولٹ کٹر کا استعمال کرتے ہیں، آخر کار اسے کاٹ کر قریب ہی زمین پر پھینک دیتے ہیں۔

تشدد کے بعد، اسے گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا اور اس کی لاش کو سڑکوں پر رسی پر گھسیٹا گیا، جبلی ویوز اخلاقی وجوہات کی بناء پر ان ویڈیوز شیئر نہیں کر رہا ہے۔



ایلینوکا میں کالونی میں ایسی تباہی مچائی گئی ہے کہ آپ کو جگہ جگہ جلی ہوئی اور بکھری ہوئی انسانی لاشیں ملبہ ملے گا۔

یخائیلو پوڈولیاک، ایک صحافی، مذاکرات کار اور یوکرین کے صدر کا مشیر، مقامی حکام میں شامل تھا جس نے جمعہ کے روز ویڈیو کی صداقت کی تصدیق کی، اور حملہ آوروں میں سے ہر ایک کی “شناخت اور ان تک پہنچنے” کا عہد کیا۔

اس نے بتایا کہ “دنیا کو یہ سمجھنا ہوگا کہ روس وحشیوں کا ملک ہے جو تشدد اور قتل سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔”

اس کے علاؤہ یوکرین کی جانب سے روس پر جنگی جرائم کے الزامات لگائے جاتے رہے ہیں ۔ جیسا کہ حال ہی میں روس کی جانب سے نکولایف میں، ایک پبلک ٹرانسپورٹ اسٹاپ کو نشانہ بنایا۔
جس میں عام شہریوں کی اموات ہوئیں ۔

نکولایف میں، روسی حملے کی بعد کے مناظر

Syed Muhammad Ali

Student of Electrical Engineering,Blogger, Website Designer, Graphic Designer, Website Manager and Social Media Manager

0 0 ووٹس
Article Rating
سبزکرائب
مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
تمام کمنٹس دیکھیں
0
Would love your thoughts, please comment.x
%d bloggers like this: