علم کے پودے لگائیے. تحریر: صابرحسین چانڈیو @SabirHussain43

علم کے پودے لگائیے

ایک ایران کا بادشاہ شکار کے لئے نکلا تو اس نے دیکھا کہ ایک بوڑھا آدمی زیتون کا پودا لگا رہا ہے۔
بادشاہ نے اس سے کہا:
اے شخص! تم تو انتہائی بوڑھے ہو جبکہ زیتون کا درخت تیس سال کے بعد پھل دیتا ہے پھر تم یہ پودا کیوں لگا رہے ہو؟
بوڑھے نے جواب دیا:
بادشاہ سلامت! ہم سے پچھلے لوگوں نے جو درخت لگائے تھے  انکا پھل ہم نے کھایا،
اب ہم اپنے بعد والوں کے لئے درخت لگارہے ہیں
یہ  جواب سن کر بادشاہ خوش ہوا اور اس نے کہا: ’’زہ‘‘۔
ایران کے بادشاہوں کی یہ عادت تھی کہ جب کوئی بادشاہ کسی شخص کے لئے یہ لفظ کہتا تو اس شخص کو ایک ہزار دینار ( یعنی سونے کے سکّے)دیے جاتے
اس شخص کو ایک ہزار دینار  دے دیے گئے تو اس نے  بادشاہ سے دوبارہ عرض کیا
بادشاہ سلامت! زیتون کا درخت تیس سال کے بعد پھل دیتا ہے لیکن اس درخت نے تو فی الفور پھل دے دیا
بادشاہ نے دوبارہ ’’زہ‘‘ کہا اور بوڑھے کو ہزار دینار مزید دے دیے گئے۔
بوڑھے نے بادشاہ کی خدمت میں تیسری بار عرض کیا:
بادشاہ سلامت! زیتون کا درخت سال میں ایک مرتبہ پھل دیتا ہے جبکہ اس درخت نے تو ایک ہی وقت میں دو مرتبہ پھل دے  دیا ہے
بادشاہ نے پھر’’ زہ‘‘ کہا اور بوڑھے کو تیسری مرتبہ ہزار دینار دیے گئے۔
یہ  منظر  دیکھ کر بادشاہ کے ہمراہی قافلے کو لے کر جلدی  جلدی  وہاں سے روانہ ہوگئے اور کہنے لگے:
اگر ہم اس شخص کے پاس کھڑے رہے تو بادشاہ کا  سارا خزانہ خالی ہوجائے گا
‫ہمارے بزرگوں  نے صدیوں پہلے  علم کے جو پودے لگائے تھے آج تک ہم ان کے پھلوں سے مستفید ہورہے ہیں۔
اب ہماری  یہ  ذمہ داری ہے کہ اسلاف کے  لگائے ہوئے ان پودوں یعنی ان کی کتابوں  کی  حفاظت اور ا نہیں  عام کرنے کے ساتھ ساتھ علم کے ایسے نئے  پودے  بھی لگائیں جو ہماری آنے والی نسلوں کے لئے فائدہ مند ثابت ہوں ۔
ایسا  کرنے سے صرف دوسروں کا ہی بھلا نہیں ہوگا بلکہ جس طرح  پودا لگانے والے بوڑھے کو فائدہ حاصل ہوا ،
اسی طرح ان شاء اللہ اخلاص کے ساتھ علم کی خدمت کرنے والا دنیا میں بھی کسی کا محتاج نہ رہے گا۔

صابر حسین
@sabirhussainrHussain43

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: