پاکستان میں پلے سٹور کی سروسز ختم کی جارہی ہیں

اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے بین الاقوامی سروس فراہم کرنے والی کمپنیوں کی 34 ملین ڈالر کی ادائیگی بلاک کرنے کے بعد موبائل صارفین یکم دسمبر 2022 سے گوگل پلے اسٹور کی خدمات حاصل نہیں کر سکیں گے۔

موبائل فرموں کے ذریعے گوگل، ایمیزون اور میٹا جیسے بیرون ملک خدمات فراہم کرنے والوں کو سالانہ 34 ملین ڈالر کی ادائیگی اس وقت تعطل کا شکار ہو گئی جب مرکزی بینک نے ڈائریکٹ کیریئر بلنگ (ڈی سی بی) میکانزم کا استعمال بند کر دیا۔

پاکستانی صارفین اب کریڈٹ کارڈ یا ڈیبٹ کارڈ کے ذریعے گوگل اور دیگر بین الاقوامی ایپس کو ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے ادائیگی کرنے پر مجبور ہوں گے۔ تاہم، کریڈٹ کارڈ کی سہولت صارفین کی ایک مخصوص تعداد تک محدود ہے، اس لیے موبائل صارفین کی اکثریت گوگل پلے اسٹور سے ایپس ڈاؤن لوڈ کرنے سے محروم رہ سکتی ہے۔

وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی کمیونیکیشن، پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) اور چار سیلولر موبائل آپریٹرز (سی ایم اوز) نے جمعے کو متفقہ طور پر اسٹیٹ بینک آف پاکستان کو ایک مشترکہ خط لکھا جس میں ادائیگی کی منسوخی کے فیصلے کو واپس لینے کی درخواست کی گئی۔

رضوان احمد

Freelance journalist Twitter account https://twitter.com/real_kumrati?s=09

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: